Home > Random > پاکستان ایک صدی بعد 2109 میں…کاشں ایسا ممکن ھو۔۔

پاکستان ایک صدی بعد 2109 میں…کاشں ایسا ممکن ھو۔۔

September 9, 2009 Leave a comment Go to comments

پاکستان ایک صدی بعد 2109 میں

امریکہ میں ای۔بی۔ایم کے دو ذہین افراد کے درمیان چیٹ ۔

جوزف : ہیلو مارک ۔ کل تم آفس نہیں آئے تھے ؟ خیریت؟
مارک: ہاں یار۔ میں پاکستانی ایمبیسی گیا تھا۔ ویزہ لینے۔

جوزف : اچھا واقعی ؟ پھر کیا ہوا ؟ میں نے سنا ہے آجکل انہوں نے بہت سختیاں کردی ہیں ۔
مارک : ہاں ۔ لیکن میں نے پھر بھی کسی نہ کسی طرح لے ہی لیا۔

جوزف: بہت اچھے یار۔ مبارک ہو۔ یہ بتاؤ کہ ویزہ پراسیس میں کتنا وقت لگا ؟ مارک : بس کچھ مت پوچھو یار۔ تقریباً مہینہ بھر لگ گیا۔ پہلی بار جب میں پاکستان ایمبیسی گیا تھا تو صبح 4:30 پر وہاں پہنچا۔ پھر بھی مجھ سےپہلے 10 لوگ کھڑے تھے۔ لمبی قطار۔ اور ہاں مجھ سے کچھ آگے بل گیٹ بھی اپنا پاسپورٹ اور بنک سٹیٹمنٹ ہاتھ میں لیا لائن میں کھڑا تھا۔

جوزف : اچھا۔ بل گیٹ کو ویزہ مل گیا ۔
مارک : نہیں۔ انہوں*نے خطرہ ظاہر کیا ہے کہ بل گیٹ پاکستان جانے کے بعد وہاں سلپ ہوجائے گا اور امریکہ واپس نہیں آئے گا۔

جوزف : یار ۔ پاکستانی ایمبیسی کو ایسا نہیں کرنا چاہیئے۔ اسلام آباد میں ہماری امریکن ایمبیسی تو پاکستانیوں کو ایک گھنٹے میں ویزہ دے دیتی ہے۔ پھر یہ کیوں*ایسا کرتے ہیں
مارک : ارے یار ۔ تمھیں تو پتہ ہے پاکستان اس وقت دنیا کی سپر پاور ہے۔ اسکا ویزہ لینا گویا مریخ کا ویزہ لینے کے برابر ہے۔ اور پھر قصور ہمارا امریکیوں کا بھی ہے۔ ہم بھی وہاں وزٹ ویزہ پر جاکر واپس نہیں آتے نا۔

جوزف : اچھا یہ بتاؤ ۔ تمھیں ویزہ کیسے مل گیا ؟
مارک : میں نے وہاں کی مشہور فرم ‘پھالیہ شوگر ملز لمٹیڈ’ سے بزنس وزٹ کا انویٹیشن منگوایا تھا۔ بس اسی بنیاد پر کام بن گیا۔

جوزف : ایک بار پھر مبارک ہو۔ یہ بتاؤ کب جا رہے ہو پاکستان ؟
مارک : جیسے ہی ٹکٹ ملا۔ دراصل میں نے دنیا کی مشہور ترین اور اعلی کلاس کی ائیر لائن میں* ٹکٹ کے لیے درخواست دی ہے۔ میرا بچپن سے خواب تھا کہ کسی دن پاکستان انٹرنیشنل ایر لائنز PIA میں سفر کر سکوں۔ اگر ٹکٹ مل گیا تو میرا دیرینہ خواب پورا ہوجائے گا۔

جوزف : پاکستان میں کتنا عرصہ رکو گے ؟
مارک : کتنا عرصہ ؟ کیا مطلب ؟ مجھے کسی پاگل کتے نے کاٹا ہے جو پاکستان چھوڑ کر واپس امریکہ آنے کی سوچوں گا۔ حقیقت یہ ہے کہ میں نے انٹرنیٹ پر چیٹ کے ذریعے پاکستان کے دوسرے بڑے شہر لاہور کے مضافات میں ایک صحت افزا مقام ‘کامونکی’ کی ایک لڑکی سیٹ کر لی ہے۔ میں اس سے شادی کرکے گرین پاسپورٹ اپلائی کردوں گا اور وہیں سیٹ ہوجاؤں گا۔

جوزف : یار تم بہت خوش قسمت ہو۔ لیکن تمھارے ماں باپ کا کیا ہوگا۔
مارک : پاکستانی گرین پاسپورٹ مل جانے کے بعد میں ماما-پاپا کو بھی وہیں بلا لوں گا۔

جوزف : کس شہر میں رہنا پسند کرو گے ؟
مارک : کامونکی والی لڑکی نے مجھے کہا ہے کہ پنجاب سٹیٹ صحت و صفائی کے اعلی معیار کی وجہ سے ویسے تو دنیا میں پہلے نمبر پر ہے۔ لیکن ہم کراچی سیٹل ہوں*گے۔ وہاں آپرچیونٹیز بہت ہیں۔ پتہ ہے نا ؟ کراچی اس وقت دنیا میں ٹریڈ اور ٹیکنالوجی کے لحاظ سے اول نمبر کا شہر ہے۔ اور وہاں کا 660 منزلہ حبیب بنک پلازہ دیکھنا بھی میری زندگی کی بہت بڑی خواہش ہے۔ سنا ہے اسکی اوپرکی 200 منزلیں بادلوں*میں ڈھکی رہتی ہیں۔ واؤؤؤؤؤؤؤؤؤؤو واٹ آ ڈریم یار۔

جوزف : اچھا یہ بتاؤ اپنے ساتھ کتنے ڈالرز لے کر جاؤ گے ؟
مارک : ڈالرز ؟ وہاں کون پوچھتا ہے۔ تمھیں پتہ ہے ایک پاک-روپے کے مقابلے میں آجکل 210 ڈالرز بنتے ہیں۔ یعنی میری اگر وہاں 10 ہزار پاکستانی بھی تنخواہ نکل آئی تو امریکہ میں چند مہینوں میں لاکھوں پتی بن جاؤں گا۔

جوزف : میں نے سنا ہے پاکستان کا لائف سٹینڈرڈ بہت اعلی ہے۔

مارک : ہاں۔ ایسے ہی ہے۔ وہاں پر

BMW لکژری کار 25 ہزار پاک روپے میں ، جبکہ مرسٹڈیز 32 ہزار میں مل ۔ لیکن مین تو سوزوکی یا چنگچی لوں گا۔ خالصتاً پاکستانی میڈ آٹوز ہیں۔ کچھ مہنگی ہیں لیکن بہت اعلی کلاس کی ہیں۔البتہ کراچی میں فلیٹ بہت مہنگے ہیں۔ اور کوئی بھی بلڈنگ 100 فلور سے کم تو ہے ہی نہیں۔ انسان ہر وقت خود کو فضاؤں میں اڑتا محسوس کرتا ہے۔

جوزف : اچھا یہ بتاؤ کہ وہاں کام کیا کرو گے۔
مارک : میں نے معلومات کی ہیں۔ وہاں پر آئی-ٹی میں بہت سکوپ ہے۔ لیکن تم تو جانتے ہو وہ ہمارے ملک کے تعلیمی معیار کو اپنے برابر نہیں سمجھتے اس لیے مجھے شروع میں وہاں کسی کسان کے ‘ گدھے’ وغیرہ نہلانے پڑیں گے۔ یا پھر ہوسکتا ہے کسی مشہور پارک کے دروازے پر ‘جوتے پالش ‘ کا کھوکھا ہی کھول لوں۔ کچھ نہ ہوا تو ٹیکسی کا لائسنس کرلوں گا۔ امریکہ سے تو پھر بھی کئی گنا بہتر کما لوں گا۔ اورہاں اگر میں وہاں کا گرین پاسپورٹ ہولڈر ہوگیا تو پھر ساری زندگی حکومت مجھے بےروزگاری الاؤنس اور میڈیکل سہولیات فری فراہم کرے گی۔ اور گرین پاسپورٹ کی بنا پر مجھے دنیا کے 80 فیصد ممالک میں بغیر ویزے کے وزٹ کرنے کی سہولت مل جائے گی۔

جوزف : بہت خوب ۔ یہ بتاؤ ۔ تمھیں انکی زبان کیسے آئے گی ؟
مارک : اوہ بھائی ۔ میں پچھلے 10 سال سے اردو لینگوئج سیکھ رہا ہوں۔ کالج میں آپشنل سبجیکٹ بھی اردو ہی لیا تھا۔ گریڈ میں پاس کیا ہے۔اور ہاں میں نے A

کیا ہے..  TOUFL Test Of Urdu as a Foreign Language

جوزف : تم بہت خوش قسمت ہو یار۔ کاش میں تمھاری جگہ ہوتا۔سنا ہے وہاں پر ٹرین سسٹم بہت اچھا ہے۔
مارک : ہاں ۔ کراچی سے لاہور اور وہاں سے پشاور اور کوئٹہ کے لیے دنیا کی تیز ترین اور آرام دہ ترین ٹرین ‘تیز گام’ چلتی ہے۔ اس میں سفر کا بھی اپنا ہی مزہ ہے۔ اور لاہور میں ہی دنیا کا مشہور فلم سٹوڈیو لالی وڈ بھی ہے۔ جہاں پر میں دنیا کے عظیم اداکاروں سلطان راہی ، شفقت چیمہ اور ریما کے مجسمے دیکھوں گا۔ سنا ہے آجکل انکے بچے بھی فلم انڈسٹری میں ہیں۔اور راولپنڈی میں دنیا کی سب سے بڑی اور گہری جھیل ‘راول ڈیم’ بھی ہے۔ اس میں بوٹنگ کرنا بھی مجھے ہمیشہ سے ہی خواب لگتا ہے۔ لیکن اب یہ خواب بھی حقیقت بن جائے گا۔

جوزف : سنا ہے ہمارا صدر اگلے مہینہ امداد لینے پاکستان بھی جائے گا ؟
مارک : ہاں۔ ایسا ہی ہے۔ اور قرضے بھی ری-شیڈول کروانے ہیں۔ پچھلے دنوں پاکستان کے محکمہ نسواریات کا منسٹر پختون خان ، وہائٹ ہاؤس آیا تھا تو 10 لاکھ روپے کا ڈونیشن تو صرف یہاں چلنے والے ایک منشیات کے ادارے کو دے گیا تھا۔ تاکہ ہماری نوجوان نسل کو زیادہ سے زیادہ منشیات باآسانی مہیا ہوسکیں۔

جوزف : اچھا تمھیں یاد ہے ہمارا پرائمری سکول کا کلاس فیلو ‘پیٹر’ ۔ وہ بھی تو کہیں پاکستان میں سیٹ ہے۔
مارک : ہاں۔ وہ کوئٹہ کے قریب ایک وادی ‘ پوستان’ میں سیٹ ہے۔ سنا ہے پوسٹ کے کھیت سے پوست اکٹھی کرنے کا کام ہے اسکا۔ ایک ہی سیزن میں اتنا کما لیتا ہے کہ باقی 6 ماہ بیٹھ کر کھاتا رہتا ہے۔ عیش ہے اسکی تو۔

جوزف : یار میں بھی پاکستانی ویزہ کے لیے اپلائی کرنا چاہتا ہوں۔ مجھے کچھ انسٹرکشن تو دو ؟
مارک : پاکستانی ایمبیسی میں ہمیشہ شلوار قمیض پہن کر جانا۔ وہ لوگ اپنے قومی لباس کو بہت اہمیت دیتے ہیں۔ اور کوشش کرنا کہ ویزہ کی درخواست انگریزی کی بجائے اردو میں پُر کرنا۔ اس سے بھی اچھا تاثر ملے گا۔اور ایمبیسی میں داخل ہوتے ہی ‘السلام علیکم ۔ جناب کیا حال ہے ؟’ کہنا مت بھولنا۔اس سے پتہ چلے گا کہ آپ کتنے مہذب ہو۔

جوزف : تھینک یو یار۔
مارک : تھینک یو نہیں شکریہ ۔ اب میں پاکستانی ویزہ ہولڈر ہوں۔ مجھے شکریہ کہنے میں فخر ہے ۔ خدا حافظ

TOUFL
Advertisements
  1. September 9, 2009 at 10:57 pm

    There is nothing wrong in being an optimist, but a few questions really took the fun out of it…as in they were just too much to laugh at…

  2. alizah
    September 10, 2009 at 12:42 am

    its Amazing.. I wish aysa hojaye
    Insha Allah aysa bhi ek waqat agyega aur bht jald aye ga Amin
    Pakistan zindabad

  3. September 10, 2009 at 10:20 am

    Wah G wah. Nice idea. Loved the idea. 😛 “TOUFL Test Of Urdu as a Foreign Language” lol and Tezgaam fastest train. hahaha……Nice imagination. May Allah make this happen all in reality.

  4. September 11, 2009 at 7:49 am

    @ Haris

    Thanks for your comment brother, you are right, I also gave it a serious thought whether to share it or not, but finally I decided to do so just to make ourselves reminded that we are running after all these things….in other countries, why not we do it ourselves…here in our country …

    @Alizah…

    Thank you for comment:)
    Pakistan zindabad..I wish so..but for this we have to work hard………………Really Hard.

    @Hassan
    Thank you for comment:)
    Amin Sum Amin 🙂

    @ All

    I believe that no one can stop us from being the best nation…however whats stopping us is our own selves, If we start leading our lives according to the Qawaneen-e-Khadawandi (principles laid down in Quran Pak) , undoubtedly we will achieve jannat in this world & the life hereafter.

  5. September 12, 2009 at 5:23 pm

    I know how much guilty one feels when such a conversation is ended on such a weird situation. But sometimes that often turns out to be an emotional dialogue from the other side O.o

  6. Ghulam Muhammad
    November 8, 2009 at 7:23 pm

    VERY OPTIMISTIC APPROACH. DEFINITELY, THIS IS NO IMPOSSIBLE, THIS HAS HAD HAPPENED IN THE HISTORY OF NATIONS AND CIVILIZATIONS THAT SOME NATIONS AND CIVILIZATION GO UP AND DOWN AFTER A LONG SPAN OF TIME. SO THIS IS POSSIBLE IF WE THE PAKISTANI WORK HARD AND BE HONEST FOR OUR MOTHERLAND AND COUNTRYFELLOW. THIS IS A RAY OF HOPE FOR PAKISTANIS. KEEP IT UP. TRY HARD. BE HONEST. DO RIGHT. INSHA ALLAH THIS WILL HAPPEN
    GHULAM MUHAMMAD

  7. November 11, 2009 at 12:07 pm

    @ Nikki
    It depends….

    @ Ghulam Muhammad

    welcome to the blog & thanks for comment
    Insha Allah..but it all depends upon us…you have highlighted all the qualities that are required..i.e: Hard work,honest & respect..I will add what Quaid has told us..Unity, Faith & Discipline…
    Keep visiting

  1. No trackbacks yet.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: